Pages

Subscribe:

Friday, 25 May 2012

زخم بھر جاتے ہیں

زخم بھر جاتے ہیں

ذہنوں سے اُتَر جاتے ہیں

دن گزرتا ہے تو پھر شب بھی گزر جاتی ہے

پھول جس شاخ سے جھڑ جاتے ہیں

مر جاتے ہیں

چند ہی روز میں

اس شاخ پہ آئندہ کے پھولوں کے نگینے سے

ابھر آتے ہیں !

تیرے جانے سے میری ذات کے اندر

جو خلا گونجتا ہے

اک نا اک دن اسے بھر جانا ہے

اک نا اک روز تجھے

میری پھیلی ہوئی ، ترسی ہوئی بانہوں میں

پلٹ آنا ہے !

0 comments:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

نوٹ:- اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔