Pages

Subscribe:

Monday, 21 May 2012

احتجاج خوشبو کا


عجیب خوف مسلط تھا کل حویلی پر

ہوا چراغ جلاتی رہی ہتھیلی پر

سنے گا کون مگر احتجاج خوشبو کا

کے سانپ زہر اُگلتا رہا چنبیلی پر

شب فراق میری آنکھ کو تھکن سے بچا

کے نیند وار نا کر دے تیری سہیلی پر

وہ بے وفا تھا تو پھر اتنا مہربان کیوں تھا

بچھڑ کے اس سے میں سوچوں اسی پہیلی پر

جلا نا گھر کا اندھیرا چراغ سے محسن

ستم نا کر یوں میری جان ! اپنے بیلی پر .

0 comments:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

نوٹ:- اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔