Pages

Subscribe:

Friday, 18 May 2012

او میرے مصروف خدا

او میرے مصروف خدا
اپنی دنیا دیکھ ذرا

اتنی خلقت کے ہوتے
شہروں میں ہے سنّاٹا

جھونپڑی والوں کی تقدیر
بجھا بجھا سا ایک دیا

خاک اڑاتے ہیں دن رات
میلوں پھیل گۓ صحرا

زاغ و زغن کی چیخوں سے
سونا جنگل چیخ اُٹھا

پیاسی دھرتی جلتی ہے
سوکھ گۓ بہتے دریا

فصلیں جل کر راکھ ہوئیں
نگری نگری کال پڑا

او میرے مصروف خدا
اپنی دنیا دیکھ ذرا

0 comments:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

نوٹ:- اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔