Pages

Subscribe:

Monday, 18 June 2012

لمس تسنہ لبی سے گزری ہے

لمسِ تشنہ لبی سے گزری ہے
رات کس جاں کنی سے گزری ہے

اس مرصع نگار خانے میں
آنکھ بے منظری سے گزری ہے

ایک سایہ سا پھڑپھڑاتا ہے
کوئی شے روشنی سے گزری ہے

لُوٹنے والے ساتھ ساتھ رہے
زندگی سادگی سے گزری ہے

کچھ دکھائی نہیں دیا ، شاید
عمر اندھی گلی سے گزری ہے

شام آتی تھی دن گزرنے پر
کیا ہوا کیوں ابھی سے گزری ہے

کتنی ہنگامہ خیزیاں لے کر
اک صدا خامشی سے گزری ہے

آنکھ بینائی کے تعاقب میں
کیسی لا حاصلی سے گزری ہے

0 comments:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

نوٹ:- اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔