Pages

Subscribe:

Wednesday, 13 June 2012

وہ جو محو تھے سر آئینہ پس آئینہ بھی تو دیکھتے

وہ جو محو تھے سر آئینہ پس آئینہ بھی تو دیکھتے

کبھی روشنی میں وہ ، تیرگی کو چھپا ہوا بھی دیکھتے

سر آب جو رہا تشنہ لب،تو یہ ضبط غم کی ہے انتہا

میرے حال پہ تھے جو نقطہ چیں،میرا حؤصلہ بھی تو دیکھتے

وہ جو اتر گئے تھے پار خود، مجھے بیچ بحر میں چھوڑ کر


تھا ان میں جو اتناحوصلہ،مجھے ڈوبتا بھی تو دیکھتے

جنھیں مجھ سے ہے یہ گلہ،کہ میں رہا بے نیازِ خلوص و ربط
میرے گرد رسم و رواج کا،کبھی دائرہ بھی تو دیکھتے
وہ میری ہنسی سے ہیں خؤش،گماں کہ نشاط زیست ہے مدعا
میرے اشک ِ غم کا رکا ہوا ،کبھی قافلہ بھی تو دیکھتے

0 comments:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

نوٹ:- اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔